How to Scale Up and Be a Thought Leader With Denise Brosseau


Baby: Welcome to my mom’s podcast.

This podcast event is a company dedicated to the protection of bees, a company dedicated to the protection of bees, a company dedicated to the protection of bees, while producing stable sour for our entire family. Without bees, our global food supply is depleted, so beekeeping protects us all. As a Certified B Corporation, it cares deeply about the bee environment, the bees of the environment, and their employees, and their customers and consumers, who we are. If you are new to bee products, I personally recommend starting with Propolis Spray. And it’s a delicious way to boost the immune system. And if you’re not familiar with propolis, it’s really incredible. Propolis is a substance that fights bacteria inside the bee and any other pathogens or invaders that enter the hive. In fact, even if a large object in a rat should enter the hive, and the bees can’t get it out, they can include it in the proposal to prevent it from getting into the hive. Prevent and prevent all kinds of bacterial problems. Propolis is a natural antibacterial. It contains a compound called pianocembran, which acts as an antifungal, and is also an antioxidant and anti-inflammatory. I personally spray it on my throat at the first sign of tickling or inhalation, and I spray it on wounds and burns for faster healing. As a listener to this podcast, you can save up to 15% on propolis and natural bee products. To make a deal, go to Bees Financial Equipment / Valensmama, and use the code “Valensma” to save 15%.

These installments are brought to you by Valence. This is followed by E-Valence, my new personal care company dedicated to creating safe and effective products from my family to your family. We started with toothpaste and hair care because they are the biggest culprits in most bathrooms and we are also coming after other personal care products. Did you know, for example, that most shampoos contain harsh detergents that remove natural oils from the hair and become more difficult to manage over time and rely more on additional products? We took a different approach, creating a passionate hair food that provides your hair with something that is not really far from its natural strength and beauty. In fact, it is specifically designed to support the natural texture of your hair, the natural color, and it is also safe for color treated hair. Our shampoos contain herbs like herbs that help strengthen hair and reduce hair loss, leave your hair and scalp healthy over time, and only with natural essential oils. The scent comes from the scent so you don’t have to worry about the scent. Well, over time, your hair will return to its strong, healthy, shiny state without the need for parabens or silicone or SLS. You can check it out along with the well-whitened toothpaste and our whole hair care bundles. Inside tip, grab the necessary bundle or try the auto plane and you’ll be off at a discount.

Katie: Hello, and welcome to Fitness Mama Podcast. I’m from KatieWellensma.com. And today, we’re talking about women as thought leaders, and maybe not the way you’re thinking. I’m here with Dennis Bruce, a serial entrepreneur who has developed a unique field of expertise. He is a thought leader in the field of thought leadership. On this he wrote a book “Written to be a thought leader?” Has written and she teaches courses on it. And the reason I wanted to keep it here these days is because I’ve always said that I think women, and especially moms, have a ton of power and in fact they’re a little and ultimately very large. Creates change. And so, we’ll talk about that today, and how she works with people to make a difference. I often think when we hear the word thought leader when we think of big time thought leaders like Dalai Lama, and Gandhi etc. when I think leadership can be in our own families. It can happen in our own communities. And I have seen examples of this in people through small-scale movements to bring about change at the social and even at the state level. And it’s really having an impact on the communities of those who started it. So today, we talk about it all. And as parents we can be thought of as leaders in our own families and we can be thought of as a nation in our communities. Jump into it at the same time. Dennis, welcome. Thanks for coming here

Dennis: Katie, I’m glad to be here.

Katie: I’m excited to be chatting with you today because I think this is a really important topic and that would be really fun to talk about in our audience that is listening today. But I always hear a little bit of background and start to find out how you got into this world and what you do.

Dennis: I’ve had a very selective career. I wasn’t one of those people who woke up after seventh grade and knew what I wanted to be when I grew up. So I started my career in the tech industry, and for many years I did software development, first marketing and then product development and then business development. Worked in some small companies and big companies. And in the meantime, I took a break to go to business school. And there I met a woman who had a huge impact on my career when she contacted me during and after school to talk about the project she was working on, why Didn’t women get any venture capital fund? And honestly it was something I didn’t know much about. I started my own business before business school, but it wasn’t where I needed to plan.

And so after we both graduated, we launched a new initiative in the Bay Area, focusing on how we can help women understand the value of venture capital. ? What difference does it make? And why it was important to scale a business and how to do it. So we started with the first chapter of our organization and in the following years in the Bay Area. First, I made it part-time and then I made it full-time and expanded it to seven cities across the country, and also helped launch the first Venture Capital Conference Spring Board for Women Entrepreneurs. And both of these initiatives were a huge step forward and an amazing experience for me to really help women grow their businesses.

And so, a few years after I quit my nonprofit publication, the two organizations continue to take the lead. But one day I got a call from a friend and he said, “You know, Dennis, how you became a thinking leader in the women’s business.” “I want to do this,” he said. And I remember thinking, “Was I really a thought leader?” It’s not the only term I’ve ever used. But over the next few years, I helped her career, from being completely hidden in her field, to testifying before the U.S. Senate, which was recognized by the White House, which is headed by the same statewide. To take such a step. And I recognize the work I’ve done in women’s entrepreneurship, where I’ve become a leader in such accidental thinking, or in fact this spokeswoman for this women’s initiative has become something else and I have a different strategic approach. I could do it for others. What if you could make a plan? What difference does it really make if you want to understand the impact of your ideas and make them more productive and implement change in a broader way? And so I doubled up on the subject and did a lot of research, started working with a lot of people, wrote a book, started teaching at Stanford as well as online with LinkedIn Learning. Read And now in my field of expertise, which is not the kind you would ever expect. But I am what people call a thought-provoking leader about the Sochi leadership.

Katie: That’s interesting. And to like, to go a little deeper into it. Can you walk us through the difference between a leader and a dry leader? Like what difference does it make?

Dennis: The way I look at it, you know, a lot of people think that a leader is just someone who just starts tweeting their big ideas. And there really is a small piece of it that is true. But to me, the difference between a leader and a thought leader is that leaders are influencing people that they can usually communicate regularly. They have some eye on either of them, so matrix organizations, some people’s contact in their communities. They see them more often or connect with them more often, while social leaders are those who force people to take their ideas and take them further, or to register or join them. Trying

So if I influence you, and then you take your idea to a third person, or a whole bunch of people, I think it’s leadership. So many, many instead of one, how do you scale your ideas? The way you spread change, the way you spread ideas, through the connection points, through your influence or through your community networks, through your online networks, through your actions and behaviors. How do you mobilize ideas in the world? To me, this is thought leadership.

Katie: Gotta, yes, that means you are capable of making a difference very quickly. And I’ve always said with the “Valence Mama” platform that I think moms in particular are the most powerful people on the planet. Because not only are we raising the next generation, and we have the direct ability to influence the next generation, but we also control a lot of purchasing power in our country, and a lot of the matrix. And so I’ve always said, I think, if Mom really stepped in, we could make an incredible difference in a very short time. And I know that maybe Mom isn’t the one people are talking about right away. Only when they think of leadership and thinking of leadership. But I think they should be, and that’s something women should think about in their own families. So from a woman’s point of view, what is the first step we can take, whether it be in our own families, in our own communities, etc., towards becoming a social leader and this positive change?

Dennis: I agree, I can’t agree more with you. I think they are mothers and grandmothers. I mean, I wonder who are the trustworthy, respectable people in society? These are mothers and grandmothers. And so if we understand the power of this platform, it’s the confidence that we’ve already got, in my opinion it’s about trust, it’s thought that leadership is about trust and how we Spread the desired ideas? How do we spread our skills and our best practices and what is really working? And I think about the power of mother bloggers, it was said that coming on the internet and mothers can be stigmatized, but you know, 15, 20 years. And so I think that, obviously, first-timers should start coming to the table with their ideas where it’s a written word, where it’s a spoken word. This camera is the ability to see and message, or is it the ability to write your thoughts. These are both good first steps, but I want to go a little further because people can be scared, “Oh, I’m not ready for that right now.”

So I think there are a couple of steps ahead of them that help make a difference in a community, and the first is to really be a convener. Again, mom has the real power to be a connoisseur around an idea. I think of all these mothers, I am with my friends who had some challenges in learning and they were in their school system, in their school system, and then often in the school system. Had to be put together. Implement changes in how learning is supported and support alternative learning strategies and styles in their school system. Gathering is really powerful for me, you are the one who brings people to the table, you set the agenda that can bring about change, and spread ideas.

And then I think the second is to be what I call an amplifier. So get the power of your voice and your platform and your social media to reinforce the best ideas. Expand the facts so that we can get rid of them, the power to spread negative information but accurate information, important details instead of gossip instead of spreading fact based information, and the thrill that often happens in society. So I think both of them, through email newsletters, through connection points, and whenever you meet people, as truth-tellers and as essential information. So that’s a long answer, but I think that’s the first step.

Katie: Got it. And I like that word. And I’ve always talked a little bit about the importance of community here and I know we’ve all heard that, you know, you’re one of the five people you spend most of your time with. And having this group and having a society is very important not only for health but also for mental health and relationships. And I want to know if you have any points for people, especially as a mother it can sometimes be lonely, living at home with the kids and being somewhat isolated. Do you have any points to start the process of calling or creating your own community and your network in which you can start spreading these changes?

Dennis: One of the most powerful I’ve seen is the use of some online tools, such as email lists. Powerful network to create community connections or nexus in our own community like online community. So I have a lot of mommy friends who have started email lists, effective email lists in their community to bring people together for easy things. Whether it’s exchanging information or saying, “Hey, my kid pushed this kid over the wheel, does anyone need anyone?” So these kinds of changes and now that we have tools like Next Door, we have tools like a powerful network, taking it to the next level, and will also bring the community together around this isolation. “Well, who’s going to take this kid; who’s going to take the kids to the pool? Let’s all walk together. We’re all going on isolated routes or, ‘Who’s going to run to the grocery store this afternoon?’ And can lift things? “

I don’t think the importance of such email lists can be overemphasized at a time when we are facing global health challenges. I mean, one of my neighbors came to me over the weekend, and you’ll know that her kids take care of my cats when I’m out of town. And she came and said, “You know, I don’t know everyone in the neighborhood. I’ve been here for five years. But what if we only have a list of emails in a complex that people have with us?” The supply of existing equipment, the supply of health that we can share in them, so I think the simplicity of a simple email list with a spreadsheet attached to it, A, in solving some of the initial challenges. There may be help that we can all face, but the other thing, as you said, is to overcome some of this loneliness, to overcome some of this feeling of loneliness.

Katie: Gota and what we have to expand into our family, I feel like mothers are naturally somewhat like leaders and of course thought leaders in their own families and with their children. Are. But are there any things we can do more consciously, to learn more about it, and some of these traits to cause aging in our children?

Dennis: I think the first thing that comes to mind is the realization that the choices we make have the power to influence the choices we make. Do we choose to be a highly intelligent leader who shares the best information? Or who are we who are retreating, fighting cats, whatever these horrible terms are, I really dislike and therefore probably shouldn’t even use it but, you know, are we the ones who Going through gossip? Or we’re just chairing about each other. In light of what is happening in our society, you will know what is good and what is positive and what is stronger in our neighborhood, in our communities, in our families than in everyone else, about which I think it’s very easy to get into this cycle. . And you know, we spend all our time talking about ideas and what’s important, instead of talking about traffic and the weather and our modern Netflix show. And what needs to happen and what we are doing to empower and implement new initiatives in our own society.

I will give you an example of a boy who I think is so powerful. مجھے نہیں معلوم کہ آپ نے ایل اے میں اس شریف آدمی کے بارے میں سنا ہے تو وہ خود کو رینگیڈ باغبان کہتا ہے۔ اور ایک دن وہ بیدار ہوا اور اس نے اپنے دروازے کے باہر دیکھا تو اس نے کہا ، “تم جانتے ہو ، میرے سامنے کے دروازے کے باہر زمین کی ایک پٹی ہے اور میں وہاں ایک باغ لگانے والا ہوں۔” اور اس کے بجائے میں کیا کروں ، کچھ پھول لگائیں ، اس نے لفظی طور پر ایک باغ لگایا ، اس نے پھلوں کے درخت اور سبزیاں لگائیں۔ اور زمین دراصل اس کی ملکیت نہیں تھی یہ شہر کی زمین تھی ، اور اسے یہ ای میل ملتا ہے اور یہ کہتا ہے ، “اپنے باغ کو توڑ دو ، یہ شہر کی زمین ہے ، آپ وہاں پودے نہیں لگا سکتے۔” اور وہ پسند ہے ، “یہ مضحکہ خیز ہے۔” اور اسی طرح اس نے اپنی برادری میں ایک درخواست شروع کی ، اور وہ باہر چلا گیا اور لوگوں کو اس گروہ میں لگایا کہ اس زمین کو کاشت کیا جانا چاہئے اور ہمیں اس کی ضرورت نہیں ہے… وہ مشرقی لا میں رہتا تھا۔ اور اس نے کہا ، “یہاں فروسوں کی کوئی دکانیں نہیں ہیں جن میں تازہ پھل اور سبزیاں ہیں۔ اگر ہم ان علاقوں میں پودے لگائیں جس کی ضرورت ہے۔ اور اسی طرح وہ اپنی درخواست سٹی ہال لے گیا اور وہ وہاں لوگوں سے منسلک ہوگیا۔ اور اس نے ان کو الٹا دیا ، نہ صرف یہ بیان کہ… نہ صرف اسے ملنے والا خط ، بلکہ دوسری زمین کو بھی تبدیل کرنا۔ اور وقت گزرنے کے ساتھ ، لاوارث جگہوں اور بے گھر پناہ گاہوں اور جگہوں کے باہر باغات بنانا شروع کردیا جہاں برادری ایک ساتھ باغات تخلیق کرنے کے لئے آسکتی ہے۔

اور مجھے لگتا ہے کہ اس طرح کے اقدامات کسی بھی فرد کے آس پاس دیکھنے اور کہتے ہوئے شروع ہوتے ہیں ، “میں کیا کرسکتا ہوں؟ مجھے کیا کرنے کی ضرورت ہے اور میں کیا کرسکتا ہوں اور اور کون بھی اس کی پرواہ کرسکتا ہے؟ اور مجھے لگتا ہے کہ ماںوں کو بالکل ایسا کرنے کی طاقت ہے۔ اور ، یقینا، ، ہم تھک چکے ہیں۔ اور ، ظاہر ہے ، ہمارے پاس ، آپ جانتے ہیں کہ ، ہمارے کاموں کی فہرست میں 1،000 چیزیں موجود ہیں ، لیکن یہ روزانہ کرنے کی فہرست اور سوچنے سے کچھ زیادہ سوچ رہی ہے ، جس کا وسیع اثر ہوسکتا ہے۔ اور مجھے لگتا ہے کہ ماں اپنے بچوں کے اسکولوں ، برادری کی تنظیموں کے ذریعہ غیر یقینی طور پر جڑے ہوئے ہیں تاکہ وہ اس قسم کی تبدیلی کو اکٹھا کرنے کا حصہ بنیں۔

کیٹی: میں بالکل اتفاق کرتا ہوں۔ اور میں اس مثال کو باغبان کے ساتھ ایل اے میں پسند کرتا ہوں۔ کیا سوچا جانے والے رہنماؤں کی بھی ایسی دوسری مثالیں ہیں جو یہ کررہے ہیں؟ کیونکہ میں کبھی کبھی سوچتا ہوں کہ جب آپ یہ اصطلاح سنتے ہیں تو ، آپ کے بارے میں سوچا جاتا ہے ، آپ جانتے ہیں ، جیسے دلائی لامہ ، یا گاندھی کا ، یا….

ڈینس: ہاں ، بالکل آپ کسی کے بارے میں سوچتے ہیں ، آپ کبھی بھی ان کے نہیں ہوجائیں گے ، ٹھیک ہے۔ لہذا میں اس لڑکی کے بارے میں سوچوں گا جس کو میں اپنی برادری میں جانتا ہوں ، وہ ایک کام کررہی تھی… مجھے لگتا ہے کہ اس نے اپنی برادری میں قائدانہ پروگرام کیا تھا۔ اور ایک چیز جو انہوں نے پوچھی تھی وہ اس کے لئے آگے بڑھنے اور ایک پروجیکٹ کا انتخاب کرنا تھا۔ اور اسی طرح اس نے اور اس کے قائدانہ پروگرام میں تین یا چار افراد نے ایک مقامی اسکول کے ساتھ یہ اقدام ان بچوں کے لئے کچھ ٹیوشن دینے کے لئے بنایا تھا جو اپنے… جب 8 ، 8 ، 9 سال کی عمر میں پڑھ لکھ نہیں سکتے تھے ، کیونکہ اکثر انگریزی ان کی پہلی زبان نہیں ہوتی تھی یا گھر پر انہیں کوئی توجہ نہیں مل رہی تھی۔ اور وہ کنڈرگارٹن لیول پر کام کرتی تھی ، اس سے آگے تھوڑا سا کام کرنا چاہتی تھی جو واضح طور پر اسباق سے محروم ہوچکے تھے۔

اور اس لئے اس نے ان چار پانچ لوگوں سے اس کی شروعات کی۔ اور پھر لیڈر شپ پروگرام ہونے کے بعد ، اس نے اسے جاری رکھا۔ اور جب بھی اسے موقع ملتا ، وہ اس کے بارے میں بات کرنا شروع کردیتی ، اس کے بارے میں وہ دوسروں سے باتیں کرنا شروع کردیتی۔ اور خود اس کے بھی بچے نہیں تھے ، لیکن وہ یہ محسوس کرنا چاہتی تھی کہ وہ اپنی برادری کے بچوں سے کوئی معاملہ کر رہی ہے۔ اور بہت تیزی سے ، اس نے لوگوں کو یہ کہتے ہوئے راغب کیا ، “ٹھیک ہے ، تم نے یہ کیسے کیا؟ اس نے کیا لیا؟ ” اور مجھے لگتا ہے کہ یہ قائد کے سوچنے کی راہنمائی کے لئے لازمی عنصر تک پہنچ جاتا ہے کیا وہ اس کو لکھتی ہیں۔ اس نے جو کچھ لیا اس کو لکھ دیا ، اس نے یہ لکھا کہ اسے منظوری کیسے حاصل کرنی ہے ، اور اس نے اسباق کیسے تیار کیے اور وہ اسے کیسے لایا… آپ جانتے ہو ، بچوں کے لئے کتابیں خریدنے کے لئے اس نے انٹرنیٹ پر کیا نگاہ ڈالی تھی۔ اور یہ سب مختلف طریقوں سے ، جو آپ جانتے ہو ، اسے وسائل مل گئے ، جو کچھ بھی اس نے لیا ، اس نے اسے لکھ دیا۔

اور میرے خیال میں ایک رہنما اور ایک سوچا رہنما کے درمیان فرق یہ ہے کہ وہ سیکھے گئے اسباق کو متنوع بناتے ہیں۔ وہ اس طریقے سے لکھتے ہیں کہ وہ دوسروں کو ایسی تکنیک دے سکتے ہیں جو کام کر رہی ہے۔ اور اس ل she ​​اس نے یہ لکھا اور اس کی شروعات اتنی ہی آسان ہوگئی ، میرے خیال میں یہ شروع کرنے کے لئے صرف گوگل کا ایک ڈاکٹر تھا۔ اور پھر بہت جلد دوسرے لوگ جنہوں نے اسے اپنے اسکولوں میں شروع کیا وہ چیزیں شامل کردیں گے۔ اور اب میں نہیں جانتا کہ پچھلے چند سالوں میں بے ایریا میں 9 یا 10 کتنے اسکول ہیں۔ اور آپ جانتے ہیں کہ یہ چھوٹا ہے اور اس کے باوجود ہر بچے پر اثر پڑتا ہے ، یہ ایک تعزیراتی تبدیلی ہے کیونکہ یہ ان کے کنبے ہیں جو بہتر ہونے جا رہے ہیں۔ اور مستقبل میں ان کے بچے اچھ areا ہوں گے ، اور ہمارے کام کرنے والے مقامات بہتر ہوں گے کیونکہ بچے بہتر تعلیم یافتہ ہیں وغیرہ وغیرہ۔ میرے خیال میں ہم ان میں سے ہر ایک کے بارے میں سوچتے ہیں کہ کافی نہیں ہے۔ اور ابھی تک ، دنیا میں ہر تبدیلی کا آغاز ایک چھوٹے سے اقدام سے ہوا۔

کیٹی: میں مانتا ہوں۔ اور میں نے دیکھا ہے کہ میری اپنی زندگی میں بھی ، چاہے یہ کمیونٹی باغات جیسی چیزیں ہوں ، جن کو میں نے عورتوں کو پیش پیش دیکھا ہے ، جیسا کہ آپ نے ذکر کیا ہے ، ایل اے میں۔ میں نے خواتین کو اس طرح کے ناقابل یقین کمیونٹی پروجیکٹس دیکھے ہیں ، یا جہاں میں رہتا تھا ، مثال کے طور پر ، اس وقت ریاست میں قانونی طور پر گھر کی پیدائش نہیں تھی ، اور وہاں خواتین کی یہ جماعت قائم ہوئی تھی اور ہم اس قابل تھے کہ قانون کو تبدیل کروائیں۔ اور ریاست بھر میں خواتین کے ل b بیئرنگ کے آپشنز کو بہتر بنانے کے ل. کہ انھوں نے واقعتا into اس پر اثر انداز کیا کہ یہاں تک کہ ہسپتالوں اور پیدائشی مراکز میں خواتین کے ساتھ سلوک کیا جاتا ہے۔ اور اس ل I میں سوچتا ہوں ، جیسے آپ نے ایک دو بار کہا ہے ، عورتیں اس میں طاقت ور ٹولز ثابت ہوسکتی ہیں اور خاص کر جب ہم برادری اور مثبت اور ایک دوسرے کو اٹھانے پر توجہ دیتے ہیں۔ کیونکہ میں یہ دیکھ رہا ہوں اور آپ اسے شاید آن لائن دنیا میں بھی دیکھیں گے ، جہاں یہ آسان ہے ، کیوں کہ ہم سب اپنے کنبے اور اپنے بچوں کی بہت زیادہ پرواہ کرتے ہیں ، لہذا ہمارے انتخاب کا دفاع کرنا آسان ہے۔ یا میں خواتین چھوٹی چھوٹی باتوں کی طرح یا ان کاموں کے بارے میں بحث کرتی ہوں جو وہ مختلف طریقے سے کر سکتی ہیں۔ اور میں نے ہمیشہ کہا ہے کہ اگر ہم مشترکہ چیزوں کے بارے میں متحد ہوسکتے ہیں ، جس کا مطلب یہ ہے کہ ہم سب اپنے بچوں کے لئے دنیا کو بہتر سے چھوڑنا چاہتے ہیں ، اور ہم سب چاہتے ہیں کہ ہمارے بچوں کو ہر موقع ملے اور معاشرے کو مضبوط اور بہتر تر بنائے۔ ان کے لیے. ہم ایسی لہریں تشکیل دے سکیں گے جو بہت تیزی سے ہماری کمیونٹیز اور ہمارے ملک کو مکمل طور پر بدل دیتے ہیں۔ اور اس ل I میں محبت کرتا ہوں کہ یہ وہ چیز ہے جو آپ لوگوں کے ساتھ کام کرنے کے لئے در حقیقت کام کر رہے ہیں۔

ڈینس: بالکل مجھے اپنے ری یونین میں جانا یاد ہے اور جیسے… یہ موسم سرما میں خواتین کا کالج تھا اور مجھے یاد آجاتا ہے کہ پنرملن میں جانا تھا۔ مجھے یاد نہیں ہے کہ یہ میرا 5 سال کا دوبارہ اتحاد یا 10 سال کا دوبارہ اتحاد تھا اور آپس میں موازنہ کرنے کی جگہ میں ایسی توانائی تھی اور ، آپ جانتے ہو ، اس شخص سے حسد کرنا جس نے بچوں کے ساتھ گھر میں قیام کیا تھا اور وہ جو گھر میں رہا تھا۔ کام کرنے والے بچوں سے حسد کرتے ہوئے۔ یا ہوسکتا ہے کہ شرمندہ ہو ، دوسروں پر الزامات لگائے جو دوسرے کام کررہے تھے ، آپ جانتے ہو ، “آپ کام کیوں نہیں کررہے ہیں؟ آپ کیوں نہیں ہیں… آپ جانتے ہو ، آپ نے یہ عظیم تعلیم حاصل کی ہے؟ مجھے نہیں معلوم ، یہ صرف تھکن کا باعث ہے۔ اگر ہم صرف آپس میں موازنہ کرنے سے روک سکتے ہیں اور منا سکتے ہیں کہ ہر ایک کیا کررہا ہے اور آپ اکٹھے ہو سکتے ہیں ، جیسا کہ آپ کہتے ہیں ، اہم چیزوں کے آس پاس۔ جب ہم اپنے لئے دنیا کو واپس لیں گے تو یہی ہوگا۔

اور یہ بھی ، میں اس میں مزید اضافہ کروں گا ، یہ کہ خود کو خود شروع کرنے کی بجائے باہر جاکر دیکھیں کہ پہلے سے کیا ہو رہا ہے۔ میں اپنی ذات اور دوسروں سے کسی حد تک مایوس ہوں جو ، جب میں ایک نیا آئیڈیا لے کر آتا ہوں تو میں فورا immediately ہی ایک نیا غیر منفعتی ادارہ یا نیا اقدام یا نئی تنظیمیں شروع کرنا چاہتا ہوں۔ جیسے ، “ایک منٹ رکو ، اگر وہاں پہلے سے ہی کچھ ہو رہا ہے تو ، کیا ہوگا؟ کیا ہوگا اگر میں جا کر اپنی توانائی اپنے معاشرے میں شروع سے ہی شروع کر رہا ہوں ، شروع سے ہی کوئی چیز تخلیق کرنے کی کوشش کرنے کی بجائے اس میں شامل کردیتا ہوں ، “کیوں کہ جیسا کہ حقیقت یہ ہے کہ آس پاس جانے کے لئے اتنے وسائل نہیں ہیں۔ اور ہم سب کو ان عالمی چیلنجوں کو حل کرنے کے لئے اکٹھے ہونے کی ضرورت ہے چاہے وہ ہمارے بچوں کی بہتر تعلیم کی ضرورت کو ٹھیک کررہے ہو ، یا ہمارے معاشرے میں پانی یا باغات کو ٹھیک کریں۔ ہمیں لازمی طور پر کسی اور منافع بخش کی ضرورت نہیں ہے ، ہمیں زیادہ سے زیادہ لوگوں کو جمع کرنے اور اگلے مرحلے میں قدم رکھنے کی بھی ضرورت ہے۔

میں آپ کو ایک کلیدی بات بتاؤں گا… اور ہوسکتا ہے کہ اپنے ننھے پالتو جانوروں میں سے کسی ایک کے پاس جانا یہ ہے کہ ہم گھنٹوں ماں کوکیز بنانے اور کھانے کی ڈرائیو کرنے اور چھوٹی چھوٹی تبدیلیاں کرنے میں بسر کرتے ہیں۔ اور ابھی تک خواتین اتنی طاقت نہیں لے رہی ہیں اور کسی قانون سازی اقدام کے ارد گرد گاڑی چلا رہی ہیں جو حقیقت میں… کو تبدیل کردے گی کہ جو بھی وجوہات ہیں جن کی وجہ سے ہم اس رقم کو اکٹھا کررہے ہیں اس کے آس پاس بہت زیادہ بڑے اثرات مرتب ہوں گے۔ اور میں نے کتنی بار اپنے دوستوں کو یہ کہتے سنا ہے ، “ٹھیک ہے ، ہاں۔ میں لوگوں کو راغب کرنے ، خواتین کو امیدوار کے لئے چندہ دینے ، یا بانڈ ڈرائیو ، یا کچھ بھی شامل کرنے کی کوشش کر رہا ہوں۔ اور میں کسی کو بھی ایسا کرنے کے ل. حاصل نہیں کرسکتا۔ ” لیکن وہ 2 گھنٹے کپ کیک بنانے میں یا 2 گھنٹے بیک اپ فروخت کرنے میں صرف کر کے خوشی سے خوش ہیں ، جو اس بانڈ کے اقدام کے مقابلے میں $ 100 بڑھا رہے ہیں ، جو $ 5 ملین بڑھا رہا ہے۔ لہذا میرے خیال میں اس سوچ کو موڑ لینا اور یہ سمجھنا بھی ضروری ہے کہ ہاں ، یہ ڈراونا ہے ، اور یہ آپ کے پہلے کام نہیں کیا ہے۔ اور یہ آپ کے معاشرے میں پہلا موقع ہے جب کسی نے کچھ لیا ہو۔ لیکن اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ یہ ناممکن ہے۔ اور وہی انرجی اور ڈرائیو لے رہے ہیں جو ہم چھوٹی چھوٹی چیزوں پر بڑی چیزوں کی طرف کرتے ہیں جس سے بہت زیادہ عالمی اثرات مرتب ہوسکتے ہیں۔ میرے نزدیک ہم اپنے وقت اور توانائی پر توجہ مرکوز رکھنا چاہتے ہیں۔ کیا اسکا کوئ مطلب بنتا ہے؟

کیٹی: اس کا کوئی مطلب ہے۔ اور میں آپ کی طرح ایک بہت بڑا پرستار بھی ہوں میں نے کہا کہ میں سوچتا ہوں… جیسے میں نے اس سے پہلے تھوڑا سا ذکر کیا تھا ، لیکن مجھے لگتا ہے کہ ہم اکثر اپنی اپنی برادریوں میں ہونے والی تبدیلی کو حقیقت میں متاثر کرنے کی اپنی صلاحیت کو کم کرتے ہیں۔ اور میں واقعتا think یہ سوچتا ہوں کہ یہ واقعی میں ایک موثر ترین جگہ ہے جہاں ہم تبدیلی شروع کرسکتے ہیں اور پھر وہاں سے بڑھ سکتے ہیں۔ اور مجھے لگتا ہے کہ خواتین خاص طور پر برادری کی تبدیلی کے لئے ناقابل یقین حد تک طاقتور ٹولز ہیں۔ اور آپ ٹھیک کہتے ہیں ، ہم بڑے سیلز یا رضاکارانہ خدمات اور چیزوں کو ڈیفالٹ کرتے ہیں۔ اور عورتیں اس کے ل. زبردست ہیں ، جب ضرورت ہو تو خواتین قدم رکھتی ہیں ، اور وہ اس میں مدد کرتے ہیں۔ لیکن اگر ہم صرف تھوڑا سا بڑا دکھائی دیتے ہیں تو ، یہ نہیں ہے کہ ہمیں بڑے پیمانے پر جانا پڑے گا یا سیاسی دفتر کے لئے چلنا ہو گا یا ملک بھر میں کچھ کرنا ہو گا ، اپنی برادری میں کچھ کرنا ہو گا ، واقعتا ہمارے پاس یہ صلاحیت موجود ہے کہ وہ خود ہی اس تبدیلی کو پیدا کرے اور اس کو متاثر کرے۔ خاص طور پر جب ہم متحد ہوجائیں۔ تو مجھے یہ خیال پسند ہے۔ اور مجھے لگتا ہے کہ آپ ٹھیک ہیں ، ہمیں اگلے دو دہائیوں میں نسبتا big بڑے مسائل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ اور مجھے لگتا ہے کہ ہمارے پاس انوکھا مقام ہے کہ وہ اس کو تبدیل کرنے کے قابل ہوسکیں۔

ڈینس: بالکل اور میری دعوت ارد گرد سے پوچھنا ہے ، عام طور پر کوئی ایسا شخص ہوتا ہے جسے آپ کی برادری میں کچھ مہارت حاصل ہوتی ہے اگر آپ پوچھتے ہیں یا آپ ارد گرد دیکھیں۔ اور دوسری بات یہ ہے کہ صرف ماں پر توجہ نہ دیں ، میرے خیال میں یہ ہے… یہ ایک معاشرتی چیلنج ہے جو عام طور پر ہم سامنا کر رہے ہیں۔ اور کام کرنے والے لوگوں کے ساتھ اکٹھا ہوکر جو ماں یا دادا نہیں ہیں یا وہ لوگ جو اقتدار کی جگہوں پر ہیں۔ لہذا میں نے اپنے شہر میں ہاؤسنگ اور ہیومن کنسرس کمیٹی میں آٹھ سال خدمات انجام دیں ، اور یہ صرف اس وجہ سے تھا کہ میں ایک دن بیدار ہوا اور مجھے احساس ہوا کہ میں نے ملک کے کچھ اعلی اسکولوں سے بہت عمدہ تعلیم حاصل کی ہے۔ اور میں نے بہت اچھی تنخواہ کے ساتھ ٹیک ٹیک نوکری حاصل کی تھی اور میں اپنے محلے میں مشکل سے بمشکل برداشت کرسکتا تھا۔ اور میں نے سوچا ، “ٹھیک ہے ، میں نے سوچا تھا کہ یہ وہی چیز ہے جس کے لئے سیلیکن ویلی تیار کی گئی تھی جیسے مجھ جیسے لوگ اچھی تعلیم اور اچھی ملازمت کے حامل تھے۔ اور اگر میں یہاں رہنے کا متحمل نہیں ہوں تو ، دوسرے لوگ دنیا میں کیسے کر رہے ہیں؟ ” اور اس طرح میں اس کے بارے میں محض ناراض تھا اور الجھن میں تھا اور اس میں فرق پیدا کرنا چاہتا تھا۔ اور تو پتہ چلا کہ آپ کو اپنے قصبے میں ہاؤسنگ کمیٹی میں خدمات انجام دینے کے لئے مقرر کیا جاسکتا ہے اور مجھے کبھی پتہ تک نہیں تھا کہ ایسی کوئی چیز ہے۔ مجھے لگتا ہے کہ میں نے ایک بار بہت بار شکایت کی اور لوگوں نے کہا ، “آپ اس کے بارے میں کچھ کرنے کیوں نہیں جاتے ہیں؟” جو دوسروں کو میری دعوت کی طرح ہے ، شکایت کرنا چھوڑ دیں ، اس کے بارے میں کچھ کریں۔

اور اسی طرح میں نے ہاؤسنگ کمیٹی میں خدمات انجام دیں اور میں نے اپنے آٹھ سالوں میں وہاں پر کئی سالوں کے لئے ایک کرسی کی حیثیت سے کام کیا اور ہم نے بہت ساری رہائشیں تعمیر کیں۔ اور یہ کامل نہیں تھا ، میں نے بہت کچھ سیکھا ، میں نے یقینی طور پر سب کچھ ٹھیک نہیں کیا ، اور مجھے بعض اوقات لوگوں کے خلاف ووٹ دینا پڑتا تھا جس کی مجھے پرواہ ہوتی ہے جو ہمارے محلوں میں مزید عمارت نہیں چاہتا ہے ، اور نہ ہی رہائش چاہتا ہے اور چاہتا ہے… آپ جانتے ہو ، چنانچہ نیمبزم یقینا own میرے اپنے کچھ دوست تھے جو کچھ اہم ووٹوں پر میرے ساتھ تھے۔ اور میں ہمیشہ نہیں جیتتا تھا۔ میرے ووٹ ہمیشہ صحیح نہیں ہوتے تھے… یا تو میری کمیونٹی کے لئے ہمیشہ قبول نہیں کیا جاتا تھا۔ لیکن میں اب دیکھتا ہوں کہ میں شہر چلا رہا ہوں اور مجھے یہ تمام عظیم رہائش نظر آ رہی ہے اور یہ نقل و حمل کے قریب ہی ہے ، اور یہ ہے… اس میں سے کچھ ہمارے اقدامات کی وجہ سے سستی ہے۔ اور میں صرف اتنا ہی سوچتا ہوں کہ میں اپنی برادری میں جو بھی وقت گزارتا ہوں اس سے زیادہ میرے لئے اہم ہے ، میں نے اپنی کمیونٹی میں کوئی اور کام کیا ہے ، کیا یہ تھا کہ ، میں جو کچھ کر سکتا ہوں سیکھنے کی کوشش کر رہا ہوں اور دوسروں کے ساتھ مل کر کام کرنے کی کوشش کروں گا۔ کسی چیز کا اثر جو واقعی اہمیت رکھتا ہے۔

کیٹی: سمجھ گیا

یہ پوڈ کاسٹ واقعہ مکھیوں کی حفاظت کے لئے وقف کردہ کمپنی ، مکھیوں کے تحفظ کے لئے وقف کردہ ، مکھیوں کے تحفظ کے لئے وقف کردہ ایک کمپنی ہے ، جبکہ ہمارے پورے کنبے کے لئے مستحکم ھٹا پیدا کیا جاتا ہے۔ شہد کی مکھیوں کے بغیر ، ہماری عالمی خوراک کی فراہمی ختم ہوجاتی ہے ، لہذا مکھیوں کی حفاظت ہم سب کی حفاظت کرتی ہے۔ ایک مصدقہ بی کارپوریشن کے طور پر ، مکھیوں کی مکھیوں سے متعلق ماحول ، ماحول کی مکھیوں ، اور ان کے ملازمین ، اور ان کے صارفین اور صارفین کے بارے میں گہری نگہداشت کرتی ہے ، جو ہم ہیں۔ اگر آپ مکھی کی مصنوعات کے استعمال میں نئے ہیں تو ، میں ذاتی طور پر ، پروپولیس اسپرے سے شروع کرنے کی سفارش کرتا ہوں۔ اور یہ قوت مدافعت کے نظام کی حمایت کرنے کا ایک مزیدار طریقہ ہے۔ اور اگر آپ پروپولیس سے واقف نہیں ہیں تو ، یہ واقعی ناقابل یقین ہے۔ پروپولیس مادہ ہے جو مکھیوں کے اندر مکھیوں کے اندر بیکٹیریا اور کسی دوسرے پیتھوجین یا حملہ آور کا مقابلہ کرتے ہیں جو چھتے میں داخل ہوتے ہیں۔ در حقیقت ، یہاں تک کہ یہاں تک کہ اگر چوہے میں کسی بڑی چیز کو بھی چھتے میں داخل ہونا چاہئے ، اور شہد کی مکھیاں اسے باہر نہیں نکال سکتی ہیں ، تو وہ اسے پروپوزل میں سمیٹ سکتے ہیں تاکہ اس کو چھتے میں لگنے سے روکنے اور ہر طرح کے بیکٹیریل پریشانی پیدا نہ ہو۔ Propolis is naturally antibacterial. It has a compound called pinocembrin that works as an antifungal, and it’s also an antioxidant, and anti-inflammatory. I personally spray it in my throat at the first sign of a tickle in my throat, or the sniffles, and I spray it on wounds and burns for faster healing. You can save 15% on propolis and all Beekeeper’s Naturals products as a listener of this podcast. To get the deal, go to beekeepersnaturals.com/wellnessmama, and use the code “wellnessmama” to save 15%.

This episode is brought to you by Wellnesse. That’s Wellnesse with an E on the end, which is my new personal care company that is dedicated to making safe and effective products from my family to your family. We started with toothpaste and hair care because these are the biggest offenders in most bathrooms, and we’re coming after the other personal care products as well. Did you know for instance that most shampoo contains harsh detergents that strip out the natural oils from the hair and leave it harder to manage over time and more dependent on extra products? We took a different approach, creating a nourishing hair food that gives your hair what it actually needs and doesn’t take away from its natural strength and beauty. In fact, it’s specifically designed to support your hair’s natural texture, natural color, and is safe for color-treated hair as well. Our shampoos contain herbs like nettle, which helps strengthen hair and reduce hair fall, leaving your hair and scalp healthier over time, and scented only with natural essential oils in a very delicate scent so that you don’t have to worry about the fragrance as well. Over time, your hair gets back to its stronger, healthier, shinier state without the need for parabens or silicone or SLS. You can check it out along with our whitening toothpaste and our full hair care bundles at wellnesse.com. An insider tip, grab an essentials bundle or try auto-ship and you will lock in a discount.

A question I like to ask toward the end of interviews that’s a little bit related, but it might be on an entirely different subject. Is if there’s a book or a number of books that have had a really dramatic impact on your life. And if so, what are they and why?

Denise: I think the book that’s probably had the most impact on my life is a book called “Switch: How to Change Things When Change Is Hard.” And it’s a book by two gentlemen Chip and Dan Heath, two brothers, one teaches on the east coast, one teaches on the west coast. And they came together to study, how does change happen? And since that’s something that I work on every day is how do I help people impact change? How do I help people to build more influence? Their studies and what they researched around the globe about how small changes can grow into global change had a huge impact on me, because they introduced me to some very powerful ideas. I invite people who don’t have time to read the book that there’s a great explainer video on YouTube that you can watch that is just excellent about understanding all the key concepts of the book. But I think I’ve probably referred people to that book more than any other I’ve ever read. And it’s had more impact on me because of the work that I do.

And I think the second is writing a book. Taking it from the other side, like which book had the most impact? Writing a book had the most impact on me. I never expected I was gonna be a writer I just felt and I think you’ve got several books out yourself. I know how, once you start putting pen to paper, you have a lot of self-doubt and as I call it, the itty-bitty-shitty committee in your brain shows up and tells you, “You’re not good enough, who are you?” Blah, blah, blah. But if you can get beyond the perfectionism and document on paper, some of the things that you know and need to pass forward to the world I think that has an incredible power.

And honestly an incredible magic, the kinds of magic that has unfolded in my life since that book came out is untold. I made probably not a penny from the book but certainly brought in a number of incredible opportunities and certainly made money from other ways speaking and coaching and consulting since I wrote that book. But mostly for me, it’s been about the small stories, the e-mails that I get from literally around the globe of people who’ve been impacted by that book. And who understood that my blueprint that I created in the book, “Ready to Be a Thought Leader,” was really about how can you take those first steps, what are the things that you need to put in place? And I wrote it as a Guidebook and a Resource Guide for anyone who was ready to start this journey or wasn’t quite sure they were ready, but what would those next steps be? And I think that that had a huge impact on my life.

Katie: Awesome. And for people who want to continue learning from your work or follow you online, where can they find you?

Denise: Thoughtleadershiplab.com. And also on LinkedIn. I have two courses there. So I welcome people to go to LinkedIn Learning. And there’s a course based on my book, and then a new one on, how do organizations build thought leadership.

Katie: Awesome. And I know you have some videos people can watch as well, I’ll make sure those are all linked in the show notes. You’ve done a TED talk. I’ll make sure people can find all those if you guys are listening while you’re doing something else, you can find all of those links at wellnessmama.fm. But Denise, thank you for being here. I think this is, like I said, a very important topic. And I think women have a great ability, especially moms to start effecting change in these ways. And I love that you are helping people do that across the board.

Denise: I look forward to seeing how this unfolds, Katie, thank you for the time.

Katie: And thank you as always to all of you for listening and for sharing one of your most valuable assets, your time with us today. We’re so grateful that you did and I hope that you will join me again on the next episode of, “The Wellness Mama Podcast.”

If you’re enjoying these interviews, would you please take two minutes to leave a rating or review on iTunes for me? Doing this helps more people to find the podcast, which means even more moms and families could benefit from the information. I really appreciate your time, and thanks as always for listening.



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back To Top